پاکستان

دعوے کھوکھلے، اسیر ملک نے 8 فروری کو شرمناک دن قرار دے دیا

شفاف انتخابات اور قومی اتحاد کی تمام باتیں کھوکھلی اور بے معنی ہیں

Web Desk

دعوے کھوکھلے، اسیر ملک نے 8 فروری کو شرمناک دن قرار دے دیا

شفاف انتخابات اور قومی اتحاد کی تمام باتیں کھوکھلی اور بے معنی ہیں

دعوے کھوکھلے، اسیر ملک نے 8 فروری کو شرمناک دن قرار دے دیا

نوبل انعام یافتہ ملالہ یوسفزئی کے شوہر اسیر ملک نے 8 فروری کو پاکستان کا سب سے شرمناک دن قرار دے دیا۔

8 فروری 2024 ملکی تاریخ کا وہ اہم ترین دن تھا جس میں ملک بھر کی عوام سمیت نامور شخصیات نے اپنا حقِ رائے دہی کا استعمال کرتے ہوئے اپنی پسندیدہ سیاسی پارٹی اور شخصیات کو ووٹ دیا۔

پاکستان کا اقتدار سنبھالنے کا خواب دیکھنے والی کئی سیاسی پارٹیوں نے عام انتخابات سے قبل ملک بھرمیں گہما گہمی مچاکر رکھی، جلسے، ریلیاں اور ان گنت خطابات  سے عوام کو اپنے لیے ووٹ ڈالنے پر امادہ کیا۔

بعدازاں عام انتخابات کے دن لوگوں کی بڑی تعداد نے گھروں سے نکل کر ووٹ ڈال کر ذمہ دار شہری ہونے کا ثبوت پیش کرکے معاملہ اللہ کے سپرد کردیا۔

ووٹ کے عمل کو کئی گھنٹے گزرنے کے بعد تاحال نتائج میں بےجا تاخیر کے بعد عوام اور پارٹیوں کے صبر کا پیمانہ لبریز ہوگیا۔

کئی  گھنٹے گزرنے کے بعد غیر حتمی اور غیر سرکاری نتائج کا اعلان وقفے وقفے سے جاری ہے، اسی کے ساتھ جہاں پاکستانی عوام میں نتیجہ جاننے میں بےصبری دیکھنے کو مل رہی ہے وہیں اسیر ملک نے پاکستان کے الیکشن کو تاریخ کا شرمناک دن قرار دے کر شدید برہمی کا اظہار کردیا۔

مائیکرو بلاگنگ سائٹ ایکس پر ملالہ یوسفزئی کے شوہر اسیر ملک نے پوسٹ جاری کی جس میں انکا کہنا تھا کہ،’صرف پاکستان میں اچھا دیکھنا چاہتے تھے، لیکن بدقسمتی سے  یہ ہماری تاریخ کا ایک شرمناک دن ہے۔’

شدید برہمی کا اظہار کرتے ہوئے اسیر ملک کا مزید کہنا تھا کہ،’اگر ووٹ تبدیل اور ضائع ہی کرنے  ہوتے ہیں توالیکشن میں سب کا وقت اور وسائل کیوں برباد کرتے ہیں۔اگر ہم عوام کی مرضی کا ہی احترام نہیں کرسکتے ہیں تو شفاف انتخابات اور قومی اتحاد کی تمام باتیں کھوکھلی اور بے معنی ہیں۔’

اسیر ملک کی پوسٹ کے بعد کئی صارفین  حمایت کرنے میدان میں آگئے اور اسیر ملک کا ساتھ دے کر اپنی رائے کا بھی اظہار کیا۔

تازہ ترین