صحت

دھنیا اور دھنیے کی پتیاں کیوں استعمال کرنی چاہئیں؟

Web Desk

دھنیا اور دھنیے کی پتیاں کیوں استعمال کرنی چاہئیں؟

دھنیا اور دھنیے کی پتیاں کیوں استعمال کرنی چاہئیں؟

دھنیا (Coriander)کو Cilantro بھی کہتے ہیں۔ یہ جڑی بُوٹی نہ صرف کھانوں کو خوش بودار اور خوش ذائقہ بنانے کے لئے استعمال کی جاتی ہے بلکہ اسے غذائیت بخش اجزا کا خزانہ بھی کہا جاسکتا ہے جس میں صحت کے لئے بے شمار فائدے ہیں۔

 اگر آپ روزمرہ خوراک میں دھنیا کو شامل کریں تو اس سے نہ صرف کھانوں کا مزا دوبالا ہو جائے گا بلکہ آپ کی مجموعی صحت پر بھی اچھا اثرے پڑے گا۔ 

خشک دھنیا اور اس کے پتوں میں مختلف وٹامنز اور منرلز مثلاً وٹامن سی، وٹامن کے، پوٹاشیم اور مینگانیز پائے جاتے ہیں اور انہیں کھانوں میں ملا کر یہ غذایتیں حاصل کی جاسکتی ہیں ٭دھنیا کے استعمال سے اینٹی آکسیڈنٹ اجزا بھی جسم کو فراہم ہوتے ہیں جو تکسیدی دبائو (Oxidative Stress) کا مقابلہ کرتے ہیں۔

 یہ اینٹی آکسیڈنٹس جسم کے خلیات کو نقصان پہنچانے والے فری ریڈیکلز کا خاتمہ کرتے ہیں جس سے مہلک بیماریوں کا خطرہ گھٹ جاتا ہے۔

 دھنیا میں جوتیل پایا جاتا ہے اس میں غذا ہضم کرنے والی خصوصیات ہوتی ہیں۔ اگر دھنیا کی پتیوں کی چٹنی کو کھانوں کے ساتھ استعمال کرنا معمول بنالیں تو آپ بدہضمی، پیٹ میں گیس بھرنے اور پیٹ کے دیگر عوارض سے محفوظ رہ سکتے ہیں ۔

دھنیا میں سوزش دُور کرنے والے مرکبات بھی پائے جاتے ہیں جو جسم میں سوزش کو کم کرنے میں مددگار ہوتے ہیں۔

 جو لوگ سوزشی امراض مثلاً آرتھرائٹس، سوزش جگر، دمہ اور ذیابیطس وغیرہ میں مبتلا ہیں انہیں دھنیا کے استعمال سے فائدہ اُٹھانا چاہیے ۔

ابتدائی تحقیق سے یہ بھی معلوم ہوچکا ہے کہ دھنیا خون میں شکر کی سطح کو معتدل رکھنے میں بھی کردار ادا کرتا ہے۔ ذیابیطس کے مریض یا جو اس میں مبتلا ہونے کا خطرہ رکھتے ہیں، وہ دھنیا کی مدد سے اپنے مرض پر قابو پانے میں مدد حاصل کرسکتے ہیں ٭دھنیا میں امراض قلب سے بچائو کا سامان بھی موجود ہے۔

 خشک یا تر دونوں اقسام کے دھنیا میں کولیسٹرول کی سطح گھٹانے کی خصوصیات ہوتی ہیں۔

 علاوہ ازیں اس کے استعمال سے بلڈپریشر بھی اعتدال میں رہتا ہے، یوں دل کی بیماریاں دُور ہوتی ہیں اور قلبی شریانی نظام صحت مند رہتا ہے ۔

دھنیا کی پتیاں یا اس کا سفوف اگرچہ بہت کم مقدار میں کھانوں میں استعمال ہوتا ہے پھر بھی چونکہ اس میں کیلوریز کم ہوتی ہیں اور فائبر زیادہ ہوتا ہے اس لئے وزن کم کرنے کے خواہشمند افراد کو اس کے استعمال میں کوئی دھڑکا نہیں ہونا چاہیے ۔

دھنیا میں پائے جانے والے مرکبات جسم کو قدرتی طور پر زہریلے اجزا سے پاک کرنے کی خصوصیت رکھتے ہیں، لہٰذا جسم کا اندرونی ماحول دھنیا کے استعمال سے صحت مند رہتا ہے۔

 کھانوں میں دھنیا کے استعمال سے جلد بھی صحت مند چمکدار رہتی ہے، جھریاں اور سلوٹیں پیدا نہیں ہوتی ہیں۔ 

چہرے کو خوبصورت اور جاذبِ نظر بنانے کے لئے دھنیا کی پتیوں اور اس کے سفوف کی لیپ بھی چہرے پر لگائی جاتی ہے ٭دھنیا میں شامل وٹامن سی اور قوت مدافعت کو توانا کرنے والے مخصوص اجزا سے جسم مختلف اقسام کے انفیکشنز اور بیماریوں کا مقابلہ کرنے کے قابل رہتا ہے۔

تازہ ترین