خواتین

سیلیسائیلک ایسڈ کہاں سے حاصل کیا جائے؟

Web Desk

سیلیسائیلک ایسڈ کہاں سے حاصل کیا جائے؟

سیلیسائیلک ایسڈ کہاں سے حاصل کیا جائے؟

جِلد کی حفاظت کے لیے ضروری ایسڈ کلاس کا نام بِیٹا ہائیڈروکسی ایسڈز (بی ایچ اے) ہے، جنھیں سیلیسائیلک ایسڈ بھی کہا جاتا ہے اور اسے ایسپرین سے حاصل کیا جاتا ہے۔ سائنس بتاتی ہے کہ یہ آرگینک کاربوژائلک ایسڈز ہیں۔ خاص بات یہ ہے کہ دونوں ایسڈز کی بناوٹ ایک جیسی ہونے کے باوجود بھی ایک دوسرے سے مختلف ہیں۔

اس ایسڈ کلاس کی سب سے عام مثال ایکنی سے حفاظت کے لیے استعمال ہونے والا سیلیسائیلک ایسڈ (ایس اے) ہے۔

 اس ایسڈ کی خاص بات یہ ہے کہ یہ چربی اور تیل کو جِلد میں جذب کرنے کی صلاحیت رکھتا ہے، اس لیے یہ چکنی جِلد پر بہت مؤثر رہتا ہے۔ یہ ایسڈ اپنی انہی خصوصیات کے باعث ’اوور دی کاؤنٹر‘ فروخت ہونے والی ایکنی مصنوعات میں بہت زیادہ استعمال ہوتا ہے۔ اس میں مساموں میں شامل ہوجانے والے سیبم اور مٹی کو صاف کرنے کی فطری صلاحیت موجود ہے۔

اس طرح یہ مساموں میں پیدا ہونے والے بیکٹیریاز کو بے اثر کرکے جِلد پر نشانات نہیں پڑنے دیتا، جو آگے چل کر جِلد کو خراب کرنے اور قبل از وقت جھریوں کی وجہ بنتے ہیں۔ یہ بیکٹیریا کے خلاف بھی مدافعت پیدا کرتا ہے اور جِلد کے سخت پڑجانے والے حصوں کے علاج میں انتہائی مؤثر ثابت ہوتا ہے۔جن مصنوعات میں اس ایسڈ کی شرح زیادہ ہو، وہ مَسوں کے علاج میں مفید رہتی ہیں۔

ایسڈز کی یہ کلاس جِلد کی فطری موٹائی، جِلد کے مدافعتی نظام اور کولاجن کی پیداوار کو بہتر بناتے ہیں۔ جن لوگوں کوایسپرین سے کسی قسم کی الرجی ہو، انھیں بی ایچ اے استعمال کرنے میں احتیاط سے کام لینا چاہیے۔

 آغاز میں اس کا استعمال کم مقدار میں اور وقفے کے بعد کرنا چاہیے اور بتدریج اضافہ کرتے ہوئے اسے روزانہ استعمال پر لایا جائے، تاکہ جِلد اس کے اثرات کو جذب کرنے کی عادی بن سکے۔

کلینزر سے لے کر ماسک تک، جِلد کی حفاظت کرنے والی تمام مصنوعات میں یہ ایسڈز موجود ہوتے ہیں۔

 اسی طرح ایسا فیس واش بھی استعمال کرنا بہتر رہتا ہے، جس میں سیلیسائیلک ایسڈ موجود ہو۔ ایسے فیس واش کو کئی منٹ تک چہرے پر ملیں، تاکہ جِلد پر اسے اپنا اثر دِکھانے کا وقت مل سکے۔

تازہ ترین