پاکستان

ایکس پر پابندی کیوں لگائی گئی؟ آخر کار وجہ پتہ چل گئی

حکومت کےپاس ایکس کی عارضی بندش کے علاوہ کوئی اور راستہ نہیں

Web Desk

ایکس پر پابندی کیوں لگائی گئی؟ آخر کار وجہ پتہ چل گئی

حکومت کےپاس ایکس کی عارضی بندش کے علاوہ کوئی اور راستہ نہیں

ایکس پر پابندی کیوں لگائی گئی؟ آخر کار وجہ پتہ چل گئی

پاکستان بھر میں پچھلے دو ماہ سے ایکس کی بندش کی وجہ سامنے آگئی۔

اسلام آباد ہائیکورٹ میں وزارت داخلہ نےسوشل میڈیاسائٹ ایکس کی بندش کےخلاف درخواست پررپورٹ جمع کرادی۔

وزارت داخلہ کی جانب سے جمع کروائی گئی رپورٹ میں کہا گیا کہ درخواست گزارکاکوئی بنیادی حق سلب نہیں ہوا،درخواست خارج کی جائے، ایکس کی بندش کےخلاف درخواست قانون وحقائق کے منافی ہے،قابل سماعت نہیں، ایکس پاکستان میں رجسٹرڈ ہے نہ پاکستانی قوانین کی پاسداری کےمعاہدےکاشراکت دار۔

رپورٹ میں یہ بھی کہا گیا کہ ایکس نے پلیٹ فارم کےغلط استعمال سےمتعلق حکومت پاکستان کےاحکامات کی پاسداری نہیں کی، حکومت پاکستان کےاحکامات کی پاسداری نہ ہونےپرایکس پرپابندی لگاناضروری تھا، ایف آئی اےسائبرکرائم ونگ نےایکس سےچیف جسٹس کےخلاف پراپیگنڈاکرنے والےاکاؤنٹس بین کی درخواست کی۔

رپورٹ کے مطابق ایکس حکام نےسائبرکرائم ونگ کی درخواست کونظراندازکیا،جواب تک نہ دیا، عدم تعاون ایکس کےخلاف ریگولیٹری اقدامات بشمول عارضی بندش کاجواز ہے۔

حکومت کے پاس ایکس کی عارضی بندش کے علاوہ کوئی اور راستہ نہیں، انٹیلیجنس ایجنسیوں کے درخواست پر وزارت داخلہ نے ایکس کی بندش کے احکامات دیے، ایکس کی بندش کا فیصلہ قومی سلامتی اورامن وامان کی صورتحال برقراررکھنےکیلئےکیاگیا۔

یہ بھی کہا گیا کہ شدت پسندانہ نظریات اورجھوٹی معلومات کی ترسیل کیلئےسوشل میڈیاپلیٹ فارمزکا استعمال کیا جارہا ہے، چند شرپسند عناصرکی جانب سے امن وامان کونقصان پہنچانے کیلئے ایکس کو استعمال کیا جارہا ہے، عدم استحکام کوفروغ دینے کیلئے ایکس کوبطورآلہ استعمال کیا جارہا ہے۔

وزارت داخلہ کی رپورٹ کے  مطابق ایکس کی بندش کا مقصد آزادی اظہار رائے یا معلومات تک رسائی پرقدغن لگانا نہیں، ایکس کی بندش کامقصدسوشل میڈیا پلیٹ فارمزکا قانون کے مطابق ذمہ دارانہ استعمال ہے، وزارت داخلہ پاکستان کے شہریوں کی محافظ اور قومی استحکام کی ذمہ دار ہے۔

رپورٹ میں کہا گیا کہ اس سے قبل حکومت کی جانب سے سوشل میڈیا پلیٹ فارم ٹک ٹاک پربھی بین لگایا گیا تھا، ٹک ٹاک کے پاکستانی قانون کی پاسداری کےمعاہدےپردستخط کےبعدبین ختم کردیا گیا تھا۔

کہا گیا کہ ایکس کی بندش آئین کے آرٹیکل 19 کی خلاف وزری نہیں ہے، سیکیورٹی وجوہات پردنیا بھرمیں سوشل میڈیا پلیٹ فارمزپرپابندی عائد کی جاتی ہے۔

وزارتِ داخلہ نے عدالت سے استدعا کی کہ ایکس کی بندش کےخلاف درخواست کو خارج کیا جائے۔

تازہ ترین