پاکستان

فوربز کی ’30 انڈر 30‘ ایشیا کی فہرست میں 7 پاکستانی نوجوان شامل

300 نوجوانوں کی فہرست میں 7 پاکستانی جگہ بناسکے۔

Web Desk

فوربز کی ’30 انڈر 30‘ ایشیا کی فہرست میں 7 پاکستانی نوجوان شامل

300 نوجوانوں کی فہرست میں 7 پاکستانی جگہ بناسکے۔

(فوٹو: سوشل میڈیا)
(فوٹو: سوشل میڈیا)

مشہور امریکی اقتصادی جریدے 'فوربز' نے اپنی رواں برس کی '30 انڈر 30' ایشیا کی فہرست جاری کردی جس میں پاکستان سے تعلق رکھنے والے 7 نوجوان کاروباری شخصیات بھی شامل ہیں۔

اس فہرست میں 30 سال کی عمر تک کے ایسے افراد کو شامل کیا جاتا ہے جو مختلف شعبوں میں نمایاں خدمات کی وجہ سے لوگوں کی توجہ کا مرکز بن جاتے ہیں۔

300 نوجوانوں کی فہرست میں جگہ بنانے والے 7 پاکستانیوں میں سرخیل شاہد بوانی، عدیل عابد، اعزاز نیئر، علی رضا، علینہ ندیم، کسریٰ زونیئر اور بشریٰ سلطان شامل ہیں۔

سرخیل شاہد

فِن ٹیک سٹارپ کمپنی ’ابھی‘ کے ہیڈ آف پروڈکٹ سرخیل شاہد بوانی کا کہنا ہے کہ ’فوربز کی 30 انڈر 30 لسٹ میں شامل ہونے پر میں بے حد خوش ہوں، یہ صرف ذاتی کامیابی کی عکاسی نہیں کرتا بلکہ پورے پاکستان میں شاندار ٹیلںٹ اور قابلیت کو ظاہر کرتا ہے‘۔

سرخیل شاہد بوانی کا یہ پروجیکٹ ورکز کو یہ اختیار دیتا ہے کہ وہ ایمرجنسی کی صورت میں اپنی تنخواہ کا ایک فیصد حصہ اپنا اگلا پے چیک آنے سے پہلے نکال سکتے ہیں۔

عدیل عابد، اعزاز نیئر، علی رضا

'فوربز' کی فہرست میں شامل 3 پاکستانی نوجوان عدیل عابد، اعزاز نیئر اور علی رضا کراچی میں قائم کردہ فری لانسرز کے پلیٹ فارم 'لنکسٹار' کے شریک بانی ہیں۔

یہ کمپنی فری لانسرز کو مفت پورٹ فولیو ویب سائٹس بنانے میں مدد کرتی ہے، ان ویب سائٹس کو 'لنکسٹار' کے ذریعہ فراہم کردہ جدید سروسز کا استعمال کرتے ہوئے وقت کے ساتھ ساتھ اپ گریڈ کیا جا سکتا ہے۔

شریک بانی علی رضا نے اس اعزاز کا سہرا اپنی ٹیم کی محنت کو دیا ہے، انہوں نے کہا کہ یہ اعزاز اس ناقابل یقین محنت کا پھل ہے جو ہماری ٹیم نے پچھلے 3 برس میں کی ہے، یہ ہمارے سفر میں صرف ایک چھوٹا سنگ میل ہے، ہماری توجہ پورے خطے میں نوجوان ٹیلنٹ کو سامنے لانے پر مرکوز ہے۔

علینہ ندیم

علینہ ندیم لاہور میں قائم ایک سٹارٹ اپ 'ایجو فائی' چلا رہی ہیں، جس کا ؐموٹو 'پہلے پڑھو، بعد میں ادائیگی کرو' ہے۔

اس کمپنی کا بنیادی ہدف زیادہ سے زیادہ پاکستانیوں کو یونیورسٹی فیس کی ادائیگی میں معاونت فراہم کرنا ہے۔

'ایجو فائی' نے ملک کے 27 کالجوں کے ساتھ شراکت کی ہے جو 'کریڈٹ-ویٹنگ' کرتے ہیں اور پھر منتخب طلبہ کی ٹیوشن فیس بطور قرض ادا کرتے ہیں، جس کے بعد یہ طلبہ پڑھائی کے دوران ماہانہ بنیادوں پر یہ رقم واپس ادا کر سکتے ہیں۔

کسریٰ زونیئر

کسریٰ زونیئر کراچی میں قائم 'ٹرکر' (Trukkr) کے شریک بانی اور سی ٹی او ہیں جوکہ پاکستان کے لاجسٹک سیکٹر کے لیے ایک انتظامی پلیٹ فارم ہے۔

2020 میں قائم کیا گیا یہ سٹارٹ اپ صارفین کو فنانسنگ حاصل کرنے، اپنے مال بردار ٹرک کو ٹریک کرنے اور صارفین سے رابطہ قائم کرنے کی سہولت دیتا ہے۔

یہ ملک کی چھوٹی اور درمیانے درجے کی ٹرکنگ کمپنیوں کو فراہم کی جانے والی پہلی ڈیجیٹل سروسز میں سے ایک ہے، اس لیے 'ٹرکر' نے عالمی سرمایہ کاروں کی توجہ حاصل کرلی ہے۔

بشریٰ سلطان

لاہور سے تعلق رکھنے والی بشریٰ سلطان ایک ماہر فلم ساز، پروڈکشن ڈیزائنر اور تخلیقی ہدایت کار ہیں جو خواتین کو درپیش سماجی چیلنجز کو نمایاں کرنے اور ان کے حل پر توجہ مرکوز کرتی ہیں۔ 

تازہ ترین