پاکستان

عمران خان کے جیل میں کمرے کی تصاویر پر کارکنان افسردہ، مخالفین کا طنز

ڈاکٹر شہباز گل نے کہا اللہ دشمن کو بھی ایسی جگہ نہ رکھے۔

Web Desk

عمران خان کے جیل میں کمرے کی تصاویر پر کارکنان افسردہ، مخالفین کا طنز

ڈاکٹر شہباز گل نے کہا اللہ دشمن کو بھی ایسی جگہ نہ رکھے۔

(فوٹو: آن لائن)
(فوٹو: آن لائن)

بانی تحریک انصاف (پی ٹی آئی) عمران خان کے اڈیالہ جیل میں کمرے کی تصاویر منظرِعام پر آنے کے بعد پارٹی رہنماوکارکنان افسردگی کا اظہار کررہے ہیں جبکہ مخالفین کی جانب سے طنزوتنقید کا سلسلہ شروع ہوگیا۔

وفاقی حکومت نے عمران خان کے اڈیالہ جیل میں کمرے کی تصاویر سپریم کورٹ میں پیش کر دیں جس کے مطابق عمران خان کو جیل میں کتابیں، ایئر کولر، ٹی وی اور ورزش کا سامان سمیت دیگر ضروری سہولیات فراہم کی گئیں ہیں۔

تصاویر میں دیکھا جاسکتا ہےکہ عمران خان کے کمرے میں ایئر کولر، ایل ای ڈی، اسٹڈی ٹیبل، کرسی اور میٹریس کی سہولت موجود ہے جبکہ انہیں ورزش کی مشین بھی فراہم کی گئی ہے۔

عمران خان کے سیل کے باہر ایک راہداری ہے جہاں انہیں دن میں 2 مرتبہ چہل قدمی کرنے کی سہولت میسر ہے۔

اُن کے سیل میں ایک علیحدہ کچن بھی موجود ہے، علاوہ ازیں اُنہیں ڈرائے فروٹس، چنے، بادام، کولڈ ڈرنکس اور چاکلیٹس بھی دستیاب ہیں۔

اِن تصاویر پر پی ٹی آئی کے آفیشل اکاؤنٹ سے تبصرہ کیا گیا کہ 'یہ ہے وہ شاہانہ کمرہ جس میں پاکستان کے سب سے مقبول لیڈر عمران خان کو 10 ماہ سے بغیر کسی جرم کے قید کر کے رکھا گیا ہے'۔

پی ٹی آئی کی جانب سے مزید کہا گیا کہ 'ایک طرف اربوں کی کرپشن کے مجرمان اس ملک میں لگثری کمروں میں سزا کاٹنے کے باوجود بھی لندن فرار ہو گئے اور ایک طرف یہ مرد مجاہد ہے جس کے جیل میں ہونے کی وجہ فی الحال صرف اس کی شادی ہے لیکن اس کے باوجود وہ اس تنگ ترین کمرے سے اپنی قوم کی جنگ ڈٹ کر لڑ رہا ہے'۔

(اسکرین شاٹ: ایکس)
(اسکرین شاٹ: ایکس)

تصاویر پر تبصرہ کرتے ہوئے رہنما پی ٹی آئی ڈاکٹر شہباز گل نے کہا کہ 'یہ تصویر میں آپ کو بہت بڑا لگ رہا ہے لیکن اصل میں بہت چھوٹا ہے، یہ ہیٹ چیمبر بن جاتا ہے، میں ایسے ایک سیل میں رہ چکا ہوں، اللہ دشمن کو بھی ایسی جگہ نہ رکھے'۔

انہوں نے کہا کہ 'اِس سے بد ترین حالت میں کبھی کوئی لیڈر نہیں رہا ہوگا، پاکستان کی ملٹری اسٹبلشمنٹ کو سوچنا چاہیے اور کتنا ظلم کرنا ہے'۔

(اسکرین شاٹ: ایکس)
(اسکرین شاٹ: ایکس)

شہباز گل نے مزید کہا کہ 'میں نواز شریف صاحب کو جیل میں دو سے تین دفعہ اندر جا کر ملا تھا، جن حالات میں عمران خان کو رکھا گیا ہے اگر نواز شریف کو رکھا جاتا تو خدا گواہ ہے نواز شریف ایک ہفتے بعد NRO لے چکے ہوتے'۔

اُن کا مزید کہنا تھا کہ 'حیرت زدہ ہوں ان بیغرتوں پر جن کو خوف خدا نہیں اور اس ڈیتھ سیل کو سہولتیں کہہ رہے ہیں'۔

(اسکرین شاٹ: ایکس)
(اسکرین شاٹ: ایکس)

رہنما پی ٹی آئی چوہدری پرویز الہٰی کے بیٹے مونس الہٰی نے 'ایکس' پر پوسٹ میں لکھا کہ 'اڈیالہ جیل میں عمران خان کے جیل سیل کی جاری شدہ تصاویر نے قوم کو اور رنجیدہ کر دیا ہے'۔

انہوں نے مزید کہا کہ 'اِن تصاویر کے بعد جعلی حکمرانوں سے عوام کی نفرت مزید شدید ہوگئی ہے، عوام نہ ان باتوں کو بھولیں گے، نہ معاف کریں گے'۔

(اسکرین شاٹ: ایکس)
(اسکرین شاٹ: ایکس)

دوسری جانب صدرِ مملکت آصف زرداری کی بیٹی بختاور بھٹو زرداری نے عمران خان کے جیل میں کمرے کی تصاویر پر طنزیہ تبصرہ کرتے ہوئے لکھا کہ 'ایک سزا یافتہ سابق وزیر اعظم کو جیل میں سنیکس، ایئرکولر، ٹی وی اور جم کے سامان کے علاوہ اہل خانہ اور پارٹی رہنماؤں سے ملاقاتوں کی لامحدود سہولتیں دستیاب دیکھ کر اچھا لگا'۔

انہوں نے یاددہانی کروائی کہ 'عمران خان کے اپنے دور میں ایک سابق صدر کو جیل میں گرمیوں میں اے سی کی سہولت کے علاوہ ذیابیطس کی انسولین کے لیے فریج سے بھی محروم رکھا گیا تھا'۔

(اسکرین شاٹ: ایکس)
(اسکرین شاٹ: ایکس)


تازہ ترین